میڈیا ڈویلپمنٹ اتھارٹی آرڈیننس مسترد، صحافتی تنظیموں کا مزاحمت کا اعلان میڈیا ڈویلپمنٹ اتھارٹی آرڈیننس مسترد، صحافتی تنظیموں کا مزاحمت کا اعلان


تصور ایک غیر آئینی اور سخت قانون ہے جس کا مقصد آزادی صحافت اور اظہار رائے کے خلاف ہے، صحافتی تنظیموں کا اجلاس (فوٹو : فائل)

کراچی: ملک بھر کی صحافتی تنظیموں نے پاکستان میڈیا ڈویلپمنٹ اتھارٹی (پی ایم ڈی اے) آرڈیننس لائے جانے کو مسترد کرتے ہوئے اتھارٹی کے قیام کے خلاف متفقہ طور پر مزاحمت کا اعلان کیا ہے۔

آل پاکستان نیوز پیپرز سوسائٹی (اے پی این ایس)، پاکستان براڈ کاسٹرز ایسوسی ایشن (پی بی اے)، کونسل آف پاکستان نیوز پیپر ایڈیٹرز (سی پی این ای)، پاکستان فیڈرل یونین آف جرنلسٹس (پی ایف یو جے برنا) پی ایف یو جے (دستور)، ایسوسی ایشن آف الیکٹرانک میڈیا ایڈیٹرز اینڈ نیوز ڈائریکٹرز (ایم ای ایم این ڈی) سمیت نمائندہ میڈیا تنظیموں کا مشترکہ اجلاس منعقد ہوا جس میں شرکا نے مجوزہ پاکستان میڈیا ڈویلپمنٹ اتھارٹی (پی ایم ڈی اے) آرڈیننس کو یکسر مسترد کردیا۔

صحافتی تنظیموں نے اس تصور کو ایک غیر آئینی اور سخت قانون قرار دیا جس کا مقصد آزادی صحافت اور اظہار رائے کے خلاف ہے۔
مشترکہ اجلاس میں متفقہ رائے تھی کہ مجوزہ ’’پی ایم ڈی اے‘‘ کا مقصد میڈیا کی آزادی کو روکنے اور اعلی انفارمیشن بیورو کریسی کے ذریعے میڈیا پر کنٹرول حاصل کرنا ہے۔ یہ تصور اس حقیقت کو نظر انداز کرتے ہوئے ایک سخت اختیار کے ذریعے میڈیا پر حکومت کی گرفت کو مضبوط کرنے کی کوشش ہے کہ پرنٹ، ڈیجیٹل اور الیکٹرانک میڈیا اپنی الگ الگ خصوصیات ہیں جن کی اپنی اپنی خصوصیات اور متعلقہ ریگولیٹری قوانین ہیں۔

شرکا نے اتفاق کیا کہ یہ اقدام ایوب خان دور کے ناکارہ پریس اینڈ پبلی کیشن آرڈیننس 1963ء (پی پی او) میں توسیع اور آزاد میڈیا کو سنبھالنے کے لیے رجمنٹل دفعات کے ساتھ تمام میڈیا پلیٹ فارموں میں توسیع کے طور پر ظاہر ہوتا ہے۔

مشترکہ اعلامیے میں کہا گیا ہے کہ جمہوری طور پر منتخب کردہ تقسیم میں اس کا کوئی مقام نہیں ہے۔ مشترکہ اجلاس میں میڈیا کو مسخر کرنے اور ان پر قابو پانے اور لوگوں کے جاننے کے حق کو کم کرنے کی اس ظالمانہ کوشش کے خلاف عوام کو آگاہ کرنے کے لیے قانونی سطح ، احتجاجی اقدامات اور اشتہاری مہم سمیت ہر سطح پر پی ایم ڈی اے کے قیام کے خلاف مزاحمت کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

اجلاس میں مزید اقدامات کا فیصلہ کرنے کے لیے اے پی این ایس، پی بی اے، سی پی این ای، پی ایف یو جے اور ایم ای ڈی کی مشترکہ ایکشن کمیٹی تشکیل دینے کا فیصلہ کیا گیا اور میڈیا پر مجوزہ حملے کی مخالفت کرنے کے لیے سیاسی جماعتوں، بار ایسوسی ایشنز، انسانی حقوق تنظیموں اور سول سوسائٹی کے دیگر طبقات سے تعاون حاصل کرنے کا فیصلہ کیا گیا۔

اجلاس میں وفاقی حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ فوری طور پر اس تجویز کو واپس لے۔

About soban

Check Also

ہیرا کو پہننے کے بے شمار فائدے۔

ستاروں کے نیک اثرات میں اضافے اور بد اثرات کو دور کرنے کیلئے ستاروں کی …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *