بیسن کے استعمال سے چہرے کے داغ دھبے ، کیل مہاسے ختم

بیسن کا نام سنتے ہی ہمارے تصور اور ذہن میں چٹ پٹے کرارے آلو پیاز کے پکوڑے اور دہی بیسن کے ملا پ سے تیار کی گئی مصالحہ دار کڑی منہ میں پانی بھر دیتا ہے۔ یہ غذائی جزو بیسن نہ صرف آپ کے زبان کے چٹخارے کو مزیدار، پکوڑوں اور بیسن کے لڈو، بیسن کے حلوے اور دوسرے انوا ع واقسام سے تقویت بخشتا ہے۔ بلکہ یہ آپ کی جلد تمام مسائل اور پریشانی کو دور کرنے کی خصوصیت بھی رکھتا ہے۔ بیسن جسے چنے کاآٹا بھی کہا جاتا ہے۔ یہ پرانے زمانے سے حسن وخوبصورتی کی حفاظت کےلیے استعمال کیاجارہا ہے۔ بیسن خاص طور پر جلد کو گہرائی تک صاف کرنے اور ایکسو لیٹر کا کام کرتا ہے۔

بلکہ حقیقتاً پرانے دور کے سنگھائی ٹریٹمنٹ بیسن سب سے اہم جز و سمجھا جاتا ہے۔ خاص طور دلہنوں کے جسم پر ان کی دلکشی اور جاذبیت کو ابھارنے کےلیے بیسن سے اسکرپٹ کیا جاتاتھا۔ دونوں کا اسکرپٹ بیسن ، چاولوں کےآٹے، پسے ہوئے بادام ، دہی اور ہلدی کے اجزاء پر مشتمل ہوتا تھا۔ اس لیے پرانے وقت کے دلہنوں کے سراپے میں مصنوعی لیپا پوتی کے بغیر ہی قدرتی چمک دمک قابل دید ہوا کرتی تھی ۔ اور شاید یہی وجہ ہے کہ پہلے زمانے میں اتنے جلدی امراض اور مسائل بھی جنم نہیں لیتے تھے ۔ لیکن حالیہ دور میں ہر دوسرا شخص جلدی بیماری میں مبتلا نظرآتا ہے۔ وجہ یہ ہے کہ یہ قدرتی چیزوں کو چھوڑ کر یہ بازاری کیمیکل سے ملاوٹ شدہ اشیاء کا چہرے پر لگانا۔

آپ کو جلد تما م اقسام کےلیے بیسن کے استعمال کرنے کے طریقے اور فوائد کے بارے میں بتائیں گے جن پر عمل پیرا ہوکر آپ نے ہر سستی اور مضر اثرات سے پاک قدرتی مصنوعا ت کو باقاعدگی سے استعمال کرکے اپنے جلد کی صحت اور حسن اور دلکشی میں اضافہ پیدا کر سکتے ہیں۔ پہلا ٹوٹکہ : بیسن صرف چکنی جلد کی حفاظت کےلیے ہی مخصوص نہیں ہے۔ بلکہ یہ حیرت انگیز طور پر خشک جلد کے لیے نہایت بہترین اور کارگرر ثابت ہوتا ہے۔ بیسن مختلف اقسام کی جلد پر مختلف طریقے کار کو لا کر استعمال میں لایا جاتا ہے۔ زیادہ تر لوگوں کا نظر یہ یہی ہے۔ کہ بیسن جلد کی اضافی چکنائی کو جذب کرنے کے لیے استعمال ہوتا ہے۔ یہ بات صیحح ہے۔ لیکن خشک جلد کے حامل خواتین بیسن سے بھر پور استفادہ حاصل کر سکتے ہیں۔ سب سےپہلے ایک پیالی میں دو کھانے کے چمچ بیسن لیں۔ اس میں کچھ دودھ یا بلائی شامل کریں ۔

کچھ شہد اور ایک چٹکی ہلد ی پاؤڈر شامل کر کے بہترین سا پیسٹ بنا لیں۔ اب اس پیسٹ پیک کو پورے چہرے پر پندرہ منٹ لگا کر چھوڑ دیں۔ یہ پیک خشک ہوجائے ۔پانی سے دھو کر صاف کرلیں۔ یہ فیس پیک خشک جلد کی حامل خواتین کےلیے نہایت آئیڈیل ثابت ہوتا ہے۔ یہ جلد سے میل کچیل صاف کرنے اور جلد کو نمی کو برقرار رکھنے میں کافی مدد فراہم کرتا ہے۔اس فیس پیک کو مہینے میں دو بار آزما کر دیکھیں ۔ آپ اپنی جلد میں خوشگوار تبدیلی اورفرق محسو س کریں گے ۔ اب بات کرتے ہیں چکنی جلد کےلیے۔ چکنی جلد کے لیے بیسن کا پیک نہایت پراثر ثابت ہوتا ہے ۔

جو گلینڈز اضافی آئل پیدا کرتےہیں۔ ان کو جذب کرنے کی خصوصیت رکھتا ہے۔ اس کے علاوہ جلد کو نرم وملائم اور چمکدار بنانے معاونت کرتا ہے۔ کسی کیمیائی اجزاء سے بھر پور فیس واش یا صابن با ر استعمال کرنے کے بجائے اگر دن میں دو بار بیسن میں چند قطرے لیموں کے شامل کرکے اس سے منہ دھویا جائے تو چہرہ نکھر ا نکھرا نظر آئے گا۔ اور چہرے پر نمایاں ہو اآئل بھی کافی حد تک کم ہوجائےگا۔ دانے اور پھوڑے پھنسیاں جلد کی سطح پر گہرے بد نما داغ دھبے چھوڑ جاتے ہیں۔ ایکنی اور پمپلز کی شکا ر جلد نہایت ہی حساس ہوجاتی ہے۔ اور اس کو خصو صی دیکھ بھال اور توجہ کی ضرورت ہوتی ہے۔

تو ایکنی اور پمپلز زدہ مسائل سے نمٹنے کے لیے بیسن سے تیارشدہ فیس پیک چہرے پر لگائیں ۔ بیسن مین شہد کو اچھی طرح مکس کرکے پیسٹ بنا لیں۔ اور پورے چہرے پر اپلائی کریں ۔ جب یہ خشک ہوجائے تو پانی سے نہایت نرمی سے دھو لیں۔ اس فیس پیک کو روزانہ کی بنیا د پر لگانے کے عمل کو یقینی بنالیں۔ شہد میں جراثیم سے لڑنےکی صلاحیت اور قابلیت موجود ہوتی ہے ۔ جس کے بدولت شہد جلد سے ایکنی او ر پمپلز کو کم کرنے اور اس کی روک تھام کے لیے مدد گا رثابت ہوتا ہے۔

About soban

Check Also

”زندگی میں اگر خوشی چاہیے تو تین با تیں اپنے ساتھ باندھ لو او ر غم کو ہمیشہ کے لیے نکال دو۔“

اچھی کتابیں اور سچے لوگ ہر کسی کو سمجھ نہیں آتے! دنیا میں کوئی نہ …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *