اب خواتین لپ سٹک کی جگہ کیا استعمال کرینگی؟نئی چیز ایجاد

میک میں اگر لپ سٹک کا استعمال نہ ہو تو میک ادھورا رہ جاتا ہے لیکن اب لپ سٹک کی جگہ ایسی نئی چیز ایجاد کر لی گئی جسے لپ سٹک کا تیز رفتار متبادل کہا جا رہا ہے جسے لِپ کارڈ کا نام دیا گیا ہے اسے نوجوان ڈیزائنر یورو زینگ نے تیار کیا ہے۔ تفصیلات کے مطابق چین میں سینکڑوں برس قبل خواتین اسی طرح کے رنگین کاغذ کو ہونٹوں پر پھیر کر اسے بطور لِپ سٹک استعمال کیا کرتی تھی اور یہ ایجاد بھی اس سے متاثر ہوکر بنائی گئی ہے۔جدید عہد کی لِپ

سٹک 1915 میں موریس لیوائی نے بنائی تھی جس میں اب تک جدتوں اور نئے رنگوں کو شامل کیا جاتا رہا ہے لیکن چین میں سینکڑوں برس قبل یانزی نامی

لپ سٹک استعمال ہوتی تھی جس میں ایک کاغذ پر مومی رنگ لگایا جاتا تھا۔ خواتین اس پر ہونٹ رکھ کر دباو ڈالتی تھیں اور ان کے ہونٹوں پر روغن اتر کر انہیں رنگدار بنا دیا کرتا تھا۔ یوروزینگ نے اسی طرز پر ایک سخت کارڈ ہولڈر میں لپ سٹک کارڈ رکھا جسے ضرورت کے وقت باہر نکالا جاسکتا ہے۔ اسے بٹوے نما کارڈ سے باہر نکال کر ہونٹوں پر استعمال کیا جاسکتا ہے۔ یورو کے مطابق چینی ایجاد آج کے تیزرفتار دور میں کام آسکتی ہے۔ اسے باآسانی جیب میں رکھا جاسکتا ہے اور دفتر، گھر یا سفر میں استعمال کیا جاسکتا ہے۔اس ایجاد کو دنیا میں پراڈکٹ ڈیزائننگ کے مقابلے اے ڈیزائن ایوارڈز میں اول انعام دیا گیا ہے۔ میک میں اگر لپ سٹک کا استعمال نہ ہو تو میک ادھورا رہ جاتا ہے لیکن اب لپ سٹک کی جگہ ایسی نئی چیز ایجاد کر لی گئی جسے لپ سٹک کا تیز رفتار متبادل کہا جا رہا ہے جسے لِپ کارڈ کا نام دیا گیا ہے اسے نوجوان ڈیزائنر یورو زینگ نے تیار کیا ہے۔

About soban

Check Also

”زندگی میں اگر خوشی چاہیے تو تین با تیں اپنے ساتھ باندھ لو او ر غم کو ہمیشہ کے لیے نکال دو۔“

اچھی کتابیں اور سچے لوگ ہر کسی کو سمجھ نہیں آتے! دنیا میں کوئی نہ …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *