تربوز پر یہ چیز ڈال کر کھا لیں جسم کی تمام گرمی 7 دن میں ختم

آپ کو ایک بہت ہی آسان اور آزمودہ علاج بتائیں گے ۔ جس کو اگر تربوز پر ڈال کر ایک خاص طریقے سے کھایاجائے ۔ تو جگر کے تمام امراض، یرقان، پلیا، بھوک نہ لگنا، معدے اور مثانے کی گرمی ، پیشاب کی جلن اور پیشاب کے قطروں کا باربار گرنا یہ تمام مسائل صرف ایک ہفتے میں ٹھیک ہوجائیں گے۔

تربو ز موسم گرما ایک بیش بہا قیمتی تحفہ ہے۔ وٹامن سی سے بھرپور یہ پھل دل اور جگر اور معدے کی کارکردگی کو بڑھاتا ہے ۔ اور اس کو صحتمند رکھنے میں اہم کردار ادا کرتا ہے۔کیونکہ یہ نسخہ آپ نے تربوز کے ساتھ استعمال کرنا ہے۔ اس لیے تربوز کوکھانے کے متعلق چند اہم احتیا طی تدابیر جاننا لازمی ہیں۔ شوگر اور دمہ کے مریض تربوز نہ کھائیں۔

کوشش کریں شام چار بجے کے بعد اس کا استعمال نہ کیا جائے۔ رات کو بالکل نہ کھائیں۔ اسے کھانے کا بہترین وقت ناشتے کے بعد اور دوپہر کھانے سے پہلے کے درمیان کا ہے۔ تربوز ہمیشہ ٹھنڈا کرکے کھائیں۔ تربوز کھانے کے بعد پانی اور چاول کا استعمال ہرگز نہ کریں۔ کیونکہ ایسی صورت میں تربوز کھایاجائےبجائے فائدے کے نقصان ہوتا ہے۔اب علاج کی طرف چلتے ہیں۔ سب سے پہلے ایک پلیٹ تربو ز کاٹ لیں۔ جتنا آپ کھا سکتےہیں۔ قلمی شورہ باریک پسا ہوا ایک چٹکی یہ معدے اور جگر کی افعال کو درست کرتا ہے۔

جوا خار کا سفوف ایک چٹکی یہ تلی کے فنکشن کو ٹھیک کرتا ہے اور جگر کی گرمی کو ختم کرتا ہے چینی ایک ٹیبل سپون۔ چینی ڈالنے سے تر بو ز گیس پیدا کرنے کی صلاحیت ختم ہوجاتی ہے۔ اس سے پیٹ میں گیس پیدا نہیں ہوتی۔ قلمی شورہ اور جوا خار آپ کو کسی بھی پنساری کی دکان سے آسانی سے مل جائے گا۔اور یہ زیادہ مہنگا بھی نہیں۔

اب یہ تینوں چیزیں بتائی مقدار کے مطابق تربو ز پر ڈال لیں۔ اور صبح خالی پیٹ استعمال کریں۔ سات دن تک استعمال کریں۔ سات دن کے بعد یرقان ، پلیا، جگر ،معدے اور مثانے کی گرمی بالکل ختم ہوجائےگی۔ اچھےرزلٹ کے لیے پندرہ دن کے لیے ضرور استعمال کریں۔ یہ علاج بہت ہی کارآمد اور فائد ہ مند ہے۔ اگر آپ ان مسائل کا شکا رہیں۔ تو اس کو ضرور استعمال کریں۔

About soban

Check Also

”زندگی میں اگر خوشی چاہیے تو تین با تیں اپنے ساتھ باندھ لو او ر غم کو ہمیشہ کے لیے نکال دو۔“

اچھی کتابیں اور سچے لوگ ہر کسی کو سمجھ نہیں آتے! دنیا میں کوئی نہ …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *