”صرف ایک چیز کھائیں اورکمر درد سے ہمیشہ کے لئے چھٹکارا پائیں“

حال ہی میں نئی سائنسی تحقیق میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ زیادہ پانی پینا دردکمر سے نجات کا ضامن ثابت ہوسکتاہے۔ تحقیق میں بتایاگیاہے کہ جسم میںپانی کمی کمردرد کا باعث ہوتی ہے۔ پانی کی کمی سے جسمانی عضلات میں لچک کم ہوجاتی ہے۔ اس سے اکثر نچلے دھڑ اور کمر میں درد پیدا ہوتاہے جسکا علاج کسی دوا میں نہیں بلکہ پانی کی صحیح مقدار میں ہے ۔جسم میں پانی کی مناسب مقدار کمردرد اور جسمانی تناو سے محفوظ رکھتی ہے۔ کمر کا درد دنیا بھر کا مسئلہ ہے اور لگ بھگ ہر کسی کو زندگی میں کبھی نہ کبھی اس کا سامنا ہوتا ہے۔عام طور پر یہ درد پسلی سے نیچے شروع ہوتا ہے اور نیچے تک پھیلتا ہوا محسوس ہوتا ہے جو کہ کافی تکلیف دہ ہوتا ہے۔خیال رہے کہ کمر درد دنیا کے ہر پانچ میں سے چار افراد کو زندگی کے کسی حصے میں اپنا شکار بناتا ہے۔بلخصوص خواتین اور بلعموم مردوں کے کمر میں درد کی بڑی وجہ اونچی ایڑیوں والے جوتے بھی ہو سکتے ہیں۔ یہ بھی ممکن ہے کہ جو سینڈل یا جوتے آپ پہن رہے ہیں ان کی ایڑیاں بظاہر ٹھیک لگ رہی ہوں لیکن ان کی غیرہمواری سے آپ کے کمر میں درد ہوتا ہو۔اس حوالے سے طبی ماہرین متفق ہیں کہ جب اونچی ایڑی والے جوتے پہنیں جائیں

تو کمر کا سارا زور اوپر سے نیچے کی جانب سرایت کرتا ہے جس کے باعث کمرے کی ہڈی اور پٹھے مسلسل دباؤ کی زد میں ہوتے ہیں۔یوں تو اونچی ایڑی والے جوتے پہننے سے گریز کریں لیکن آپ نے پہننے کا فیصلہ ہی کرلیا تو اپنے سینے کو تھوڑا باہر نکال کر چلیں اس طرح نصف دباؤ تقسیم ہو کر گھٹنے پر منتقل ہوجائےگا۔ہمارا بستر یقیناً راحت اور سکون پہنچانے کا بہترین ذریعہ ہے لیکن خیال رہے کہ اگر آپ کے استعمال میں غیرمعیاری میٹرس (گدے) ہے تو درحقیقت آپ اپنی کمرے کے لیے متعدد مسائل کو دعوت دے رہے ہیں۔ایسا اکثر دیکھنے میں آیا ہے جو لوگ سخت میٹرس کا استعمال کرتے ہیں انہیں نرم میٹرس پر راحت محسوس نہیں ہوتی۔محققین کے نزدیک جو لوگ درمیانی درجے (یعنی زیادہ سخت اور نہ ہی زیادہ نرم) کا میٹرس اپنے سکون کے لیے استعمال کرتے ہیں وہ کمر کے درد سے بہت حد تک دور رہتے ہیں۔اس لیے ضروری ہے کہ آپ اپنے زیر استعمال میٹرس کا جائزہ لیں۔کمر جھکا کر بیٹھنا کمر درد کو بدتر بناتا ہے خاص طور پر اگر زیادہ وقت بیٹھ کر گزارتے ہیں،

تو کمپیوٹر استعمال کرتے کی بورڈ کی جانب جھکنے سے گریز کریں اور بالکل سیدھا بیٹھیں جبکہ کندھوں کو پرسکون رکھیں۔سڈنی یونیورسٹی کی تحقیق میں بتایا گیا ہے کہ جو لوگ مختلف قسم کی ورزشوں کے عادی ہوتے ہیں ان میں ایک سال کے اندر کمر درد کی شکایت میں 35 فیصد تک کمی آجاتی ہے۔اسی طرح جو مریض ورزش کے ساتھ ساتھ بھاری چیزوں کو اٹھانے اور بیٹھنے کے مناسب طریقے کو اپناتے ہیں، ان میں اس درد کا خطرہ 45 فیصد تک کم ہوجاتا ہے۔جب کمر میں درد ہو تو سونا مشکل ہوجاتا ہے، مگر اکثر یہ کمر درد ناکافی نیند کی وجہ سے بدتر ہوتا ہے۔آپ کے سونے کا خراب انداز کمردرد کو بڑھا دیتا ہے، اگر آپ اکثر کمردرد کا شکار رہتے ہیں تو پہلو کے بل لیٹنے کی کوشش کریں، آپ گھٹنے کے درمیان تکیہ رکھ لیں تاکہ ریڑھ کی ہڈی قدرتی پوزیشن میں رہے اور کمر کو دباﺅ سے ریلیف ملے۔اللہ ہم سب کا حامی وناصر ہو۔آمین

About soban

Check Also

”زندگی میں اگر خوشی چاہیے تو تین با تیں اپنے ساتھ باندھ لو او ر غم کو ہمیشہ کے لیے نکال دو۔“

اچھی کتابیں اور سچے لوگ ہر کسی کو سمجھ نہیں آتے! دنیا میں کوئی نہ …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *