سعودی عرب میں ملازمتوں کے لیے کفیل نظام ختم

ریاض: سعودی عرب میں آج ملازمتوں کے نئے قانون کے نفاذ کے ساتھ پرانا کفیل والا نظام ازخود ختم ہوگیا۔

العربیہ نیوز کے مطابق سعودی عرب میں ملازمتوں کے لیے ’’کفالہ نظام‘‘ ختم کرکے نیا قانون نافذ کردیا گیا ہے۔ اب غیر ملکی ملازمین جب چاہئیں ملازمت اپنی مرضی سے تبدیل کرسکتے ہیں یعنی اب غیر ملکی ملازمین کفیکل کے زیر اثر نہیں رہیں گے۔

ملازمتوں کے اس سہہ نکاتی نظام میں آجر اور اجیر کے حقوق کا تحفظ کو یقینی بنایا گیا ہے۔ کوئی بھی غیر ملکی ملازم جب چاہے ملازمت تبدیل کرسکے گا جس کے لیے کفیل کے اثر رسوخ ختم کردیا گیا ہے۔

غیر ملکی ملازمین اس قانون کے تحت نہ صرف ایک محکمے سے دوسرے محکمے میں ٹرانسفر ہوسکتے ہیں بلکہ انہیں زائد اوقات کار اور کم تنخواہوں جیسے مسائل سے بھی چھٹکارہ مل جائے گا۔تنخواہ بھی کفیل کی مرضی سے نہیں بلکہ صلاحیت اور تجربے کی بنیاد پر ہوگی۔

اس قانون سے ایک بڑا فائدہ یہ بھی ہے کہ غیر ملکی ملازمین ایمرجنسی کی صورت میں اپنے ملک تعطیلات پر جاسکتے ہیں اور اس کے لیے انہیں کفیل کی اجازت لینا نہیں ہوگی بلکہ یہ سہولت لیبر لاز کے تحت حاصل ہوگی۔

واضح رہے کہ سعودی عرب میں اس وقت کم وبیش 80 لاکھ اور 44 ہزار غیر ملکی ملازمین کام کر رہے ہیں جو براہ راست اس نئے قانون سے فائدہ اُٹھاسکتے ہیں۔

About soban

Check Also

”زندگی میں اگر خوشی چاہیے تو تین با تیں اپنے ساتھ باندھ لو او ر غم کو ہمیشہ کے لیے نکال دو۔“

اچھی کتابیں اور سچے لوگ ہر کسی کو سمجھ نہیں آتے! دنیا میں کوئی نہ …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *